اُس کی خواہش کو خود پہ تان رکھا- خوب  سے  خوب  اپنا  دھیان   رکھا

غزل

 

اُس کی خواہش کو خود پہ تان رکھا
خوب  سے  خوب  اپنا  دھیان   رکھا

 

آشنائی  تھکن  سے  ہو اُس  کی
اِس  لیے  خستگی  کا  مان  رکھا

 

بالکُونی    سے  جھانکتی   ہو گی
زعم   دل   میں   براجمان     رکھا

 

ایک  بوڑھے  سے  پیڑ  کے  مانند
اپنے  سینے  میں اک جہان  رکھا

 

یار     تُو    یہ   بتا     شعیب عدنؔ
کیا  کبھی   سر  پہ  آسمان   رکھا؟

شعیب عدنؔ ۔۔۔منڈی بہاءالدین

مزید دیکھیں
Back to top button
Close
Close