دشمنِ جان کو مات کر لیجئے – چار دن احتیاط کر لیجئے (Itbaf Abrak Poetry)

غزل

دشمنِ جان کو مات کر لیجئے

چار   دن  احتیاط   کر    لیجئے

 

اپنے گھر کی حسیں مکینوں کو

اپنی   کل   کائنات   کر    لیجئے

 

رحم   خود   پر  اگر  نہیں   آتا

اپنے بچوں کے ساتھ کر لیجئے

 

یہ کوئی قید ہے کی گھر بیٹھے

جس سے چاہیۓ بات کر لیجئے

 

دل ملا لیجئے  اجازت  ہے

دور لیکن یہ ہاتھ کر لیجئے

 

فکر اپنی ہر ایک سے پہلے

کام ہے واہیات، کر لیجئے

 

آج موقع ہے مال و دولت کو

اپنی  راہِ  نجات  کر  لیجئے

 

یہ  حفاظت  بھی  عبادت  ہے

جس قدر ہے  بساط کر لیجئے

شاعر: اتباف برک

مزید دیکھیں
Back to top button
Close
Close